ضیائے کون و مکان لا الٰہ الا اللہ

ضیائے کون و مکان لا الٰہ الا اللہ

بنائے نظمِ جہاں لا الٰہ الا اللہ

 

شفائے دردِ نہاں لا الٰہ الا اللہ

سکونِ قلبِ تپاں لا الٰہ الا اللہ

 

نفس نفس میں رواں لا الٰہ الا اللہ

رگِ حیات کی جاں لا الٰہ الا اللہ

 

بدستِ احمدِ مرسل ؐبفضلِ ربِّ کریم

ملی کلیدِ جناں لا الٰہ الا اللہ

 

دلوں میں جڑ جو پکڑ لے تو برگ و بار آئیں

ابھی ہے زیرِ زباں لا الٰہ الا اللہ

 

ہے تار تار اسی سے تو چادرِ ظلمت

چراغِ نور فشاں لا الٰہ الا اللہ

 

شجر حجر ہوں کہ جنّ و بشر کہ ماہی و مرغ

سبھی کے وردِ زباں لا الٰہ الا اللہ

 

سرور و کیف و حلاوت نظرؔ جو ہے درکار

صباح و شام بخواں لا الٰہ الا اللہ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

زمین و آسماں گُونجے بیک آواز، بسم اللہ
اَلحَمَّد توں لے کے وَالنَّاس تائیں​
اَزل سے یہی ایک سودا ہے سر میں
میری بس ایک آرزو چمکے
سخی داتا نہ کوئی تیرے جیسا
کرو رب کی عبادت، خدا کا حکم ہے یہ
تو خبیر ہے تو علیم ہے، تُو عظیم ہے تُو عظیم ہے
محبت کا نشاں ہے خانہ کعبہ
خدا ہی مرکزِ مہر و وفا ہے
کہوں میں حمدِ ربّی کس زباں سے