اردوئے معلیٰ

Search

طائِف میں ایک نُور کا پیکر لہُو لہُو

یا کربلا میں دیکھا ہے خنجر لہُو لہُو

 

کربل کتھا کا ہم کو ذرا حوصلہ نہِیں

ہوتا ہے دِل ہی داستاں سُن کر لہُو لہُو

 

سر شاہ کا جُدا تو کیا ہے لعِین نے

محوِ کلام نیزے پہ ہے سر لہُو لہُو

 

دیکھا ہے جب سے چشمِ تصوُّر سے کربلا

جنگل لہُو ہے، دشت لہُو، گھر لہُو لہُو

 

رکھتا ہُوں ضبط آنکھ پہ ذکرِ حسین پر

کرتا مگر ہُوں دِل کو میں اکثر لہُو لہُو

 

دربار میں جو بِیبیاں بے چادروں کے تِھیں

بے چارگی میں ہو گا وہ منظر لہُو لہُو

 

نہرِ فراتؔ آج بھی حسرتؔ اُداس ہے

حُرملؔ نے تِیر داغا، ہے اصغرؔ لہو لہو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ