طلوعِ صبح کا عنوان ہے علی اکبر

طلوعِ صبح کا عنوان ہے علی اکبر

شبیہِ صاحبِ قرآن ہے علی اکبر

 

مہک رہا ہے گلستانِ آلِ سرور میں

وہ باغِ نور کا ریحان ہے علی اکبر

 

بوجہِ عکسِ محمد، بوجہِ خونِ علی

جہانِ حسن کا سلطان ہے علی اکبر

 

حسین ابنِ علی کا یہ لاڈلا بیٹا

کریم ذات کا احسان ہے علی اکبر

 

حسینِ پاک، علی، فاطمہ کے دل کا سکوں

امینِ الفتِ خاصان ہے علی اکبر

 

خدا کے دین پہ ہو کر فدا لڑکپن میں

حریمِ خلد کا مہمان ہے علی اکبر

 

ملا ہے جس کے مناقب سے روشنی کا وفور

وہ آلِ نور کا ذیشان ہے علی اکبر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ