کیا شان شہنشاہ کونین نے پائی ہے

 

کیا شان شہنشاہ کونین نے پائی ہے

ختم آپ کی ہستی پر ہر ایک بڑائی ہے

 

ہر ایک فضیلت کے ہیں مظہر کامل وہ

کیا ذات شہ والا خالق نے بنائی ہے

 

کون ان کے برابر ہو کون ان کے مماثل ہو

ایسی تو کوئی ہستی آئے گی نہ آئی ہے

 

جنت کا تصور اب کیا آئے مرے دل میں

تصویر مدینے کی آنکھوں میں سجائی ہے

 

آزاد و عام ہے وہ کاظمیؔ مسکین

آقائے دو عالم سے لو جس نے لگائی ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

کالی کملی والے
نہیں ہے کام اب مجھ کو کسی سے
جانے کب اوج پہ قسمت کا ستارا ہوگا
حالِ دل کس کو سناوں آپ کے ہوتے ہوئے
ہر سانس ہجر شہ میں برچھی کی اک اَنی ہے
لکھوں مدح پاک میں آپ کی مری کیا مجال مرے نبی
اللہ نے پہنچایا سرکار کے قدموں میں
مرا کیف نغمۂ دل، مرا ذوق شاعرانہ​
مجھے عنایت، جو زندگی ہے اسی کا محور مرا نبیؐ ہے
جشن میلاد النبیؐ ہے صاحب قرآن کا

اشتہارات