اردوئے معلیٰ

Search

عُشاق اُٹھ رہے ہیں ترے در کی خاک سے

ائے سجدہ گاہِ حسن ، زرا مل تپاک سے

 

طاقوں میں پھڑپھڑانے لگی مشعلوں کی لوء

دل کانپنے لگے ہیں محبت کی دھاک سے

 

یوں تو اُڑی ہے نیند ، مگر غم کسے رہا

یہ رتجگے تو اور بھی ہیں خوابناک سے

 

ہنس کر گلے لگاو تو عریانیاں چھپیں

دامان مل چکے ہیں گریباں کے چاک سے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ