اردوئے معلیٰ

Search

عکسِ روئے مصطفے سے ایسی زیبائی ملی

کِھل اُٹھا رنگِ چمن ، پُھولوں کو رعنائی ملی

 

سبز گنبد کے مناظر دیکھتا رہتا ہوں میں

عشق میں چشمِ تصور کو وہ گیرائی ملی

 

جس طرف اُٹھیں نگاہیں محفلِ کونین میں

رحمۃ للعٰلمین کی جلوہ فرمائی ملی

 

ارضِ طیبہ میں میسر آگئی دو گز زمیں

یوں ہمارے منتشر اجزا کو یکجائی ملی

 

اُن کے قدموں میں ہیں تاج و تخت ہفت اقلیم کے

آپ کے ادنٰی غلاموں کو وہ دارائی ملی

 

بحرِ عشقِ مصطفے کا ماجرا کیا ہو بیاں

لطف آیا ڈوبنے کا جتنی گہرائی ملی

 

چادرِ زہراؓ کا سایہ ہے مرے سر پر نصیرؔ

فیضِ نسبت دیکھیے ، نسبت بھی زہرائی ملی

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ