اردوئے معلیٰ

غزل کے روپ میں نعتوں کا آئینہ دیکھو

اِس آئینے میں ذرا تابشِ وِلا دیکھو

 

یہ شاعری جو نہیں بے جہت کسی رخ سے

اِسی کو اب جرسِ کارواں بنا دیکھو

 

تڑپ رہا ہے یہ دل یادِ شہرِ طیبہ میں

زُجاجِ شعر میں احساس برملا دیکھو

 

دلوں میں طِیبِ محبت بسی ہے اُس در کی

عقیدتوں کا صحیفہ کھلا ہوا دیکھو

 

ہے اِتِّبَاع کا جذبہ جو شعرِ مدحت میں

فضائے جاں اُسی جذبے سے اب سجا دیکھو

 

وِلائے سیدِ والا کا رنگ پھیلا دو

عمل کا باغ اُسی سے ہرا بھرا دیکھو

 

ہر ایک لمحہ عبادت میں ہو شمار عزیزؔ

تمام عمر جو آقا کا نقشِ پا دیکھو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات