اردوئے معلیٰ

قبلۂ اہلِ نظر کوچہ شہِ نوّاب کا

قبلۂ اہلِ نظر کوچہ شہِ نوّاب کا

کعبۂ اہلِ صفا روضہ شہِ نواب کا

 

منزلِ عشقِ نبی اب مجھ کو بھی ہوگی نصیب

چْن لیا ہے میں نے بھی رستہ شہِ نوّاب کا

 

چاہتے ہو دامنِ حیدر سے جو وابستگی

تھام لو تم دامنِ زیبا شہِ نوّاب کا

 

آ گئی یک لخت میرے گلشنِ دل میں بہار

لب پہ میرے نام جب آیا شہِ نوّاب کا

 

کیا مری نظروں کو بھائے حسن کا پیکر کوئی

میں ازل کے دن سے ہوں شیدا شہِ نوّاب کا

 

مفلسی اس سے کبھی نظریں ملا سکتی نہیں

مل گیا جس شخص کو صدقہ شہِ نوّاب کا

 

اب مجھے کوئی ضرورت کا نہیں احساس تک

ناز ہے قسمت پہ ہوں منگتا شہِ نوّاب کا

 

اِن سے اُن سے پوچھنے سے فائدہ کچھ بھی نہیں

اہلِ دل سے پوچھیے رتبہ شہِ نوّاب کا

 

یادگارِ خواجۂ اجمیر ان کی ہر ادا

اسوۂ غوث الوریٰ اسوہ شہِ نوّاب کا

 

نورِ عینِ فاطمہ چشم و چراغِ مرتضیٰ

کوئی پا سکتا نہیں پایہ شہِ نوّاب کا

 

شوکتِ شاہی بھی دے کوئی اگر مجھ کو مجیبؔ

چھوڑ کر جاؤں نہ میں کوچہ شہِ نوّاب کا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ