اردوئے معلیٰ

Search

قلبِ ویراں کو نُور دیتا ہے

بندگی کا شعور دیتا ہے

 

صدقِ دل سےجو مغفرت مانگے

اس کو ربِ غفُور دیتا ہے

 

ذکرِ مولا ہی جان لو اتنا

راحتوں کا وفُور دیتا ہے

 

ذکر اُس کا ہو ، وہ بھی خلوت میں

اک عجب سا سرور دیتا ہے

 

حمد و مدحِ حبیب کی خاطر

کتنی عُمدہ سطور دیتا ہے

 

جو بھی رکھتے ہیں تن کو پاکیزہ

اُن کو من کا طہور دیتا ہے

 

سب سے بڑھ کے رضا کا ہے مُژدہ

ساتھ حُور و قصور دیتا ہے

 

گر سفینہؓ سا عبدِ صادق ہو

شیر خود ہی مرُور دیتا ہے

 

ہو کے نادم معافیاں مانگو

بخش سارے قصور دیتا ہے

 

جو بھی مانگو جلیل جب مانگو

میرا مولا ضرور دیتا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ