لبِ ازل کی صدا لَا اِلٰہ اِ لّا اللہ

لبِ ازل کی صدا لَا اِلٰہ اِ لّا اللہ

ازل سے قبل بھی تھا لَا اِلٰہ اِ لّا اللہ

 

دلیل کیا ہے کسی ماسوا کے ہونے کی

گواہ ساری خدائی خدا کے ہونے کی

 

نوائے کُن کی بنا لَا اِلٰہ اِ لّا اللہ

 

حدِ شعور، سُراغِ بلندی و پستی

حصارِ مشرق و مغرب، احاطہِ ہستی

 

مدارِ ارض و سما لَا اِلٰہ اِ لّا اللہ

 

چراغِ ذہن، ضیائے نگاہ، نُورِ جبیں

جمالِ عشق، وقارِ خودی، اساسِ یقیں

 

متاعِ صبر و رضا لَا اِلٰہ اِ لّا اللہ

 

اذانِ گردشِ دوراں، نمازِ جنّ و بشر

وظیفہِ شجر و سنگ، وردِ شمس و قمر

 

دعائے ابرو ہوا لَا اِلٰہ اِ لّا اللہ

 

نظر میں وسعتِ کون و مکاں کو ضم دیکھے

کمالِ رحمتِ حق پھر قدم قدم دیکھے

 

کہے تو کوئی ذرا لَا اِلٰہ اِ لّا اللہ

 

رکھی گئی تھیں اِسی پر وطن کی بنیادیں

خدا کرے کہ فلک ہم ان کو پہچادیں

 

پکارتی ہے فضا لَا اِلٰہ اِ لّا اللہ

 

ہر ایک شے کو فنا ہے ہر اسم ہے فانی

یہ کائنات کا سارا طلسم ہے فانی

 

بس ایک حَرفِ بقا لَا اِلٰہ اِ لّا اللہ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

ایک بے نام کو اعزازِ نسب مل جائے
نام بھی تیرا عقیدت سے لیے جاتا ہوں
جس دل میں نور عشق ہے ذات الہ کا
تجھی سے التجا ہے میرے اللہ
ترے کرم تری رحمت کا کیا حساب کروں
خدا ہے حامی و ناصِر ہمارا
خدایا میں نحیف و ناتواں کمزور انساں ہوں
سدا دِل میں خدا کی یاد رکھنا
کہوں حمدِ خدا میں کس زباں سے
ترے انوار دیکھوں یا خُدا مجھ کو نظر دے