اردوئے معلیٰ

مت پوچھئیے کہ راہ میں بھٹکا کہاں کہاں

مت پوچھئیے کہ راہ میں بھٹکا کہاں کہاں

روشن میں میرے نقشِ کفِ پا کہاں کہاں

 

تِریاک اپنے زہر کا اپنے ہی پاس تھا

ہم ڈھونڈتے پھرے ہیں مداوا کہاں کہاں

 

لمحوں کے آبشار میں اک بلبلہ ہوں میں

کیا سوچنا کہ جائے گا جھرنا کہاں کہاں

 

تکیے پہ محوِ خواب ، تہہِ تیغ ہے کہیں

لَو دے رہا ہے شعر ہمارا کہاں کہاں

 

پَر سوختہ ہیں ، رات بڑی ، فاصلے بہت

لاکھوں چراغ ، ایک پتنگا کہاں کہاں

 

سائے میں بیٹھنے کی جگہ سوچتے ہیں ہم

پہنچا نہیں درخت کا سایا کہاں کہاں

 

چُوڑی کا ایک ریزہ چُبھا تھا کہیں اُسے

میں ایک زخم چُوم رہا تھا کہاں کہاں

 

تھے ہر صدف میں اشکِ ندامت بھرے ہوئے

کاٹے گئے ہیں دستِ تمنا کہاں کہاں

 

اک گردِباد ہے کہ مظفرؔ مری انا

مجھ کو اُڑائے گا یہ بگولا کہاں کہاں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ