مجمعِ لطف و عطا ، مرجعِ خیر و توفیق

مجمعِ لطف و عطا ، مرجعِ خیر و توفیق

اللہ اللہ تری طبعِ کرم ، خُوئے خلیق

 

نعت الہامِ مجلیٰ بہ حرائے باطن

حرف اور صوت سے ممکن نہیں جس کی تطبیق

 

میری زنبیلِ سخن میں زرِ خیراتِ ثنا

سائلِ بابِ کرم ہے مرا جذبِ تشویق

 

درگہِ نعت میں کس طَور ہو تدبیرِ سخن

سر نہادہ ہے سخنور کی جہاں فکرِ عمیق

 

نسبتِ نعت ہی رکھے گی سرِ بزم نہال

نام لیوا ہی ترے ہوں گے سرِ حشر عتیق

 

منظرِ فرحتِ جا ہے یہ ترا گنبدِ سبز

چارۂ کربِ نہاں ہے یہ ترا شہرِ انیق

 

خَلق کے مطلعِ اول پہ ہے تُو نُور فشاں

بخدا یومِ ولادت نہیں یومِ تخیلق

 

حاملِ مجد و شَرف ہیں ترے اقوالِ حسیں

ضامنِ فوزِ مکمل ہیں ترے طَور ، طریق

 

وہ مدینہ ، وہ ترا شہرِ تجلی آباد !

سنگریزے ہیں جہاں نازشِ مرجان و عقیق

 

نعت ، توفیق و عنایت ہے ولا کی مقصودؔ

ورنہ کیا خامہ ہے ، کیا حرف و سخن کی ترزیق

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ