اردوئے معلیٰ

Search

محبتوں کے نئے زاویے دکھا رہے تھے

کہ سنگِ راہ کو ہم آئنہ بنا رہے تھے

 

میں بدنصیب نے آخر یہ دن بھی دیکھنا تھا

میں مر رہا تھا مرے دوست مسکرا رہے تھے

 

یہ معجزہ بھی تو اندھوں کے دیس میں ہوا تھا

جو دیکھ سکتے نہیں تھے، ہمیں دکھا رہے تھے

 

ہمارے پاس مسرت کی کوئی بات نہ تھی

کسی کے دکھ تھے یہاں اور ہم اٹھا رہے تھے

 

میں لکھنے بیٹھا تو میری غزل میں ڈھل گئے ہیں

وہ سارے لفظ جو پہلے مری دعا رہے تھے

 

میں جاگتا تھا تو کوئی ادھر نہ آتا تھا

میں سو گیا تو مجھے سب سلانے آ رہے تھے

 

عجیب دکھ تھا کہ میرا کلیجہ پھٹ رہا تھا

وہ لو گ میری کہانی مجھے سنا رہے تھے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ