اردوئے معلیٰ

Search

محبوبِ خدا سرورِ ذی شان درخشاں

بندوں پہ ہیں اللہ کا احسان درخشاں

 

طیبہ کے ہیں نہ صرف گُلستان درخشاں

ہیں شہرِ مدینہ کے بیابان درخشاں

 

رُخسار و لب و عارِضِ سرکار کی کیا بات

ہیں لعلِ یمن شاہ کے دندان درخشاں

 

اللہ کے محبوب کی عظمت پہ بِلاشک

ناطق ہے ہر اِک آیتِ قرآن درخشاں

 

بندوں کو عطا کی درِ حق تک ہے رسائی

اُن سے ہی مِلا رب کا ہے عِرفان درخشاں

 

اصحابِ نبی سارے ہی ذی شان ہیں لیکن

صدیق و عُمر حیدر و عثمان درخشاں

 

جاں اپنی لُٹاتے ہیں یہ ناموسِ نبی پر

دنیا میں ہے عُشاق کی پہچان درخشاں

 

دن رات رُخِ سرورِ کونین تھے تکتے

اصحابِ محمد کا ہے ایمان درخشاں

 

ہو سوزِ جِگر آنکھ بھی نم دل ہو تڑپتا

طیبہ کے یہ زائر کا ہے سامان درخشاں

 

گرمی کی تمازت سے مِلے امن و اماں گر

محشر میں مِلے شاہ کا دامان درخشاں

 

کرتا ہے رقم شاہِ مدینہ کی یہ مدحت

مرزا پہ ہے سرکار کا احسان درخشاں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ