محمد مصطفیٰ کی آ رزو کر لوں

محمد مصطفیٰ کی آرزو کر لوں

مگر پہلے میں اشکوں سے وضو کر لوں

 

بہت روضے کو دیکھا ہے تصور میں

میں اپنے آپ کو بھی روبرو کر لوں

 

مجھے بھی عشق ہے محبوب سے تیرے

اجازت ہو تو میں بھی جستجو کر لوں

 

مجھے روضے پہ اے دل حوصلہ دے دے

میں اُن سے دو گھڑی تو گفتگو کر لوں

 

میں لکھ کر آنسوؤں سے نعت کا ناصرؔ

تمنا ہے کہ خود کو سرخ رو کر لوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ