اردوئے معلیٰ

مدحتِ شاہِ دو عالم کا ثمر کیا کہنے!

مجھ پہ اللہ کی رحمت کا اثر کیا کہنے!

 

پوچھ لو زائرِ طیبہ سے بہت پیارا ہے

ساری دنیا سے مدینے کا سفر کیا کہنے!

 

آپ کی جشنِ ولادت کی خوشی میں آقا

رب نے بخشے سبھی ماؤں کو پسر کیا کہنے!

 

ساری دنیا میں کہیں اور نہیں ہے بے شک

خلد سے بڑھ کے مدینے کا نگر کیا کہنے!

 

آپ کے ہاتھ اُٹھے ٹوٹ گیا چاند آقا

دوڑ کر آیا سلامی کو شجر کیا کہنے!

 

میری راہوں میں بچھاتے ہیں ملائک تارے

پیارے آقا کی اطاعت کا ثمر کیا کہنے!

 

اے رضاؔ حرمتِ آقا پہ فدا جاں اپنی

جس نے کی ہو گیا دنیا میں امر کیا کہنے!

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات