اردوئے معلیٰ

مری زندگی پہ نہ مسکرا، میں اداس ہوں

مرے گمشدہ مرے پاس آ، میں اداس ہوں

 

کسی وصل میں بھی بقائے سوزشِ ہجر ہے

غمِ عاشقی ذرا دور جا، میں اداس ہوں

 

میں منڈیرِ درد پہ جل رہا ہوں چراغ سا

مری لو بڑھا مجھے مت بجھا، میں اداس ہوں

 

مرے حافظے کا یہ حال وجہ ملال ہے

مرے چارہ گر مجھے یاد آ، میں اداس ہوں

 

ترا مسکرانا زوال ہے مرے درد کا

یونہی بات بات پہ مسکرا، میں اداس ہوں

 

مرے لب تھے زینؔ کسی دعا سے سجے ہوئے

مجھے لگ گئی کوئی بددعا، میں اداس ہوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات