مرے دل میں بہت مدت سے ارمانِ مدینہ ہے

 

مرے دل میں بہت مدت سے ارمانِ مدینہ ہے

سجے ہیں اشک آنکھوں میں کہ جیسے آبگینہ ہے

 

گھرا ہوں گردشِ طوفانِ عصیاں میں،مرے آقا

ہے بحرِ بیکراں طغیانی ہے میرا سفینہ ہے

 

غبارِ راہِ طیبہ ہے عقیدت کا حسیں محور

جبینِ شوق کی منزل درِ شاہِ مدینہ ہے

 

عقیدت کے سوا افکار کا حاصل نہیں کچھ بھی

ختن کے مشک سے بھی بڑھ کے آقاکا پسینہ ہے

 

کرم شاہِ مدینہ کا ہوا ہے میری ہستی پر

مرے مرشد سے جاری مجھ کو فیضانِ مدینہ ہے

 

سدا منظرؔ رہے مصروفِ نعت و مدحِ سرور میں

محبت کے قرینوں میں سخن بھی اک قرینہ ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ