اردوئے معلیٰ

Search

مرے دل میں سمائی ہے عقیدت غوثِ اعظم کی

سدا قائم رہے یا رب یہ قُربت غوثِ اعظم کی

 

پُکارا جب بھی یا میراں تو مشکل ٹل گئی میری

رہی مجھ پر ہمیشہ ہی یہ شفقت غوثِ اعظم کی

 

غلامی میرِ میراں کی سکونِ قلب دیتی ہے

لحد میں آسرا دے گی یہ نسبت غوثِ اعظم کی

 

ہمیشہ سے بھکارن ہوں شہِ بغداد کے در کی

مری جھولی کو بھرتی ہے سخاوت غوثِ اعظم کی

 

زمانے بھر کے ولیوں سے ہے رُتبہ آپ کا بالا

ولی ہیں مقتدی سارے امامت غوثِ اعظم کی

 

نبی کی آل کے گوہر ہیں اور محبوبِ سبحانی

ولی سب جانتے ہیں یہ حقیقت غوثِ اعظم کی

 

خزانے آ گئے دنیا و دیں کے میرے دامن میں

ملی ہے ناز کو ایسی محبت غوثِ اعظم کی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ