مرے مولا کہتا رہوں سدا , تری شان جل جلالہ

مرے مولا کہتا رہوں سدا , تری شان جل جلالہ

مجھے کر عطا یہی سلسلہ , تری شان جل جلالہ

 

تری قدرتوں کا شمار کیا , تری عظمتوں کا حساب کیا

تو خدا ہے میرے حبیب کا , تری شان جل جلالہ

 

یہ کرم ہے تیرا مرے خدا ، جو میں کہہ رہا ہوں یہ برملا

میں ترا ہوں اور ہے تو مرا ، تری شان جل جلا لہ

 

مرے سینے میں تیری روشنی , مرے چار سو تیرا نور ہے

مجھے ظلمتوں سے بچا لیا , تری شان جل جلا لہ

 

مری جستجو کو کمال دے , مری آرزو کو نہال کر

رہوں بن کے تیرا ہی میں سدا , تری شان جل جلا لہ

 

تری یاد میں ہی حیات ہو , ترے ذکر پر ہی ممات ہو

یہ قبول کر میری التجا , تری شان جل جلالہ

 

مرے آنسوؑوں کو صدا ملے , مری سسکیوں کا بھرم رہے

رہے لب پہ ہر دم تری ثنا , تری شان جل جلالہ

 

تو ہی عرش پر تو ہی فرش پر , تو ہی شاہ رگ سے قریب تر

ترے جلوے پھیلے ہیں جا بجا , تری شان جل جلالہ

 

مری زندگی کا سرور تو , مری بندگی کا ہے نور تو

مرے ہر عمل کے اے آشنا , تری شان جل جلالہ

 

پڑی مشکلیں میرے سر پہ جب ، مجھے گھیرا درد و الم نے جب

ترے ذکر نے دیا حوصلہ , تری شان جل جلالہ

 

کبھی لڑکھڑایا نہیں ہوں میں , کبھی بے قرار ہوا نہیں

ملا ہر گھڑی ترا آسرا , تری شان جل جلالہ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

خدا کی یاد سے یوں دل لگا لو
مجھے الفاظ کی خیرات عطا کر
سرِّ توحید
تو ہے مشکل کشا، اے خدا، اے خدا
تو ہست تو ہی بود، تیری ذات لاشریک ​
خوشا وہ دن حرم پاک کی فضاؤں میں تھا
سرورِ قلب و جاں، اللہ ہی اللہ
خداوندا! ہمیں صدق و صفا دے
خدا کی عظمتوں کے ہیں مظاہر سمندر، کوہ و بن، صحرا بیاباں
خُدا ہی خالقِ کون و مکاں ہے