مر بھی جائے تو تری بات سے جی اُٹھتا ہے

مر بھی جائے تو تری بات سے جی اُٹھتا ہے

دلِ بے صوت کرامات سے جی اُٹھتا ہے

 

تیرا انعام فزوں ہے، ترا احسان رفیع

کہ گدا اپنے سوالات سے جی اُٹھتا ہے

 

رات کے پچھلے پہر دیدۂ حیرت کے قریں

ایک لمحہ ہے جو لمعات سے جی اُٹھتا ہے

 

نعت گو عجز سے بُنتا ہے حروفِ مدحت

خامہ پھر تیری عنایات سے جی اُٹھتا ہے

 

آنکھ کو رہتی ہے گو صبحِ کرم کی خواہش

خواب تو وصل کی سوغات سے جی اُٹھتا ہے

 

شوق اِک ہجر زدہ مرگ کا سنسان وجود

خواہشِ دید کی خیرات سے جی اُٹھتا ہے

 

دل بہت دیر سے ہے خانۂ بے نُور و ضیا

ہو عنایت کہ تری بات سے جی اُٹھتا ہے

 

اوڑھ لے کوئی اگر خواہشِ احرامِ ثنا

زیست کی سرحدِ میقات سے جی اُٹھتا ہے

 

کیا عجب ہے تری آمد کا یہ احساسِ دروں

وصل کا لمس، خیالات سے جی اُٹھتا ہے

 

اُن کی مدحت کی ہے مقصودؔ جُداگانہ لگن

حرف خود شوخیٔ نغمات سے جی اُٹھتا ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

دلکش و حسنِ مجسم تری اعلیٰ قامت
نکل رہی ہے آہ پھریہ قلبِ بے قرار سے
نعت لکھنے کا یہ سامان بنا لوں تو لکھوں
دلوں کو رکھتا ہے روشن جمالِ گنبدِ خضرا
طیبہ نگر کا مجھ کو بھی زادِ سفر ملے
ہے نرالے جوش پر کچھ آج فیضانِ رسول
خواب میں زلف کو مکھڑے سے ہٹالے آجا
رحمتِ بے كراں مدینہ ہے
ہم شہر مدینہ کی ہوا چھوڑ چلے ہیں
قدرتِ حق کا شہکارِ قدرت اک نظردیکھ لوں دور ہی سے

اشتہارات