اردوئے معلیٰ

مشعلِ حرف لئے نور بکف ہو جائیں

کاش ہم اپنے زمانے کا شرف ہو جائیں

 

عقل کہتی ہے چلو ساتھ زمانے کے چلیں

ظرف کہتا ہے کہ ہم ایک طرف ہو جائیں

 

دل یہ کہتا ہے ترا نام اُتاریں دل میں

اور کسی گہرے سمندر میں صدف ہو جائیں

 

حیف وہ جنگ کہ دونوں ہی طرف ہوں اپنے

ہائے وہ لوگ جو خود اپنا ہدف ہو جائیں

 

کشتیاں اپنی جلائی ہیں عدو نے اِس بار

اب تو لازم ہے کہ ہم جان بکف ہو جائیں

 

معرکہ کوئی بھی مشکل تو نہیں، اہلِ حرم

توڑ کر دائرے گر شامل صف ہو جائیں

 

ڈر رہا ہوں کہ یہ اوراقِ شب و روز مرے

یوں نہ ہو عہدِ ضرورت میں تلف ہو جائیں

 

کون زحمت کرے پھر شمعیں جلانے کی ظہیرؔ

جب سیہ رات کے شکوے ہی شغف ہو جائیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات