میرے دل میں ہے یاد محمد میرے ہونٹوں پہ ذکر مدینہ

 

میرے دل میں ہے یاد محمد میرے ہونٹوں پہ ذکر مدینہ

تاجدار حرم کے کرم سے آ گیا زندگی کا قرینہ

 

ان کی چشم کرم کی عطا ہے میرے سینے میں ان کی ضیاء ہے

یاد سلطان طیبہ کے صدقے میرا سینہ ہے مثل نگینہ

 

میں غلام غلامان احمد میں سگ آستان محمد

قابل فخر ہے موت میری قابل رشک ہے میرا جینا

 

مجھ کو طوفان کی موجوں کا کیا ڈر یہ نکل جائے گا رخ بدل کر

ناخدا ہیں مرے جب محمد کیسے ڈوبے گا میرا سفینہ

 

دولت عشق سے دل غنی ہے میری قسمت ہے رشل سکندر

مدحت مصطفیٰ کی بدولت مل گیا مجھے یہ خزینہ

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

ضیائے سدرہ و طوبیٰ و کل جہاں روشن
ہر نبی شاہدِ خدا نہ ہوا​
زمیں سے تا بہ فلک ایسا رہنما نہ ملا
یا رب ثنا میں کعب کی دلکش ادا ملے
ہوئے جو مستنیر اس نقشِ پا سے
وَرَفَعنا لَکَ ذِکرَک
بس قتیلِ لذتِ گفتار ہیں
مجھ پہ چشمِ کرم اے میرے آقاؐ کرنا
قائم ہو جب بھی بزم حساب و کتاب کی
بغیرِ رحمتِ یزداں نہ ممکن ہے، نہ آساں ہے

اشتہارات