اردوئے معلیٰ

Search

میرے عیبوں کو زمانے سے چھپاتا تُو ہے

ہوں بروں سے بھی برا پھر بھی نبھاتا تُو ہے

 

یہ بھی اِک خاص کرم مجھ پہ ہے مولا تیرا

جب بھی گرتا ہوں مجھے، آکے اٹھاتا تُو ہے

 

رات اور دن کا ملن اور یہ خورشید و قمر

یہ نشاں اپنی خدائی کے دکھاتا تُو ہے

 

سورہ الحمد کا تحفہ ہمیں دے کر مولا

سیدھے رستے پہ ہمہ وقت بلاتا تُو ہے

 

گلشنِ قلب میں آتی ہیں خزائیں جب بھی

اپنی رحمت سے مگر پھول کھلاتا تُو ہے

 

تاک میں بیٹھے ہیں دشمن بڑے عیار مگر

پاک دھرتی کو خزاؤں سے بچاتا تُو ہے

 

خالق کل بھی تو ہی، قادر و قیوم بھی تو

’’ ذرئہ خاک کو خورشید بناتا تُو ہے ‘‘

 

جب بھی گھرتا ہے مصائب میں ترا یہ طاہرؔ

جام خوشیوں کے اِسے خوب پلاتا تُو ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ