اردوئے معلیٰ

نُورِ مدحت سے مرا قلب منور رکھنا

 

نُورِ مدحت سے مرا قلب منور رکھنا

مدحِ سرکار سے لہجے کو معنبر رکھنا

 

تیرے محبوب کو آقائی ہے زیبا مالک

مجھ کو ہر وقت غلامی پہ مقرر رکھنا

 

چند لمحوں کی جدائی بھی اگر ہو لازم

فرقتِ سرورِ کونین موخر رکھنا

 

کوئی لمحہ نہ رہے ذکرِ نبی سے خالی

جانِ عالم کے تصور سے معطر رکھنا

 

سبز و شاداب رہے یادِ نبی کا گلشن

نخلِ افکار کو یاربّ مرے مثمر رکھنا

 

کوئی مشکل مجھے درپیش ہو جب بھی مولا !

یا الہیٰ مجھے منصور و مظفر رکھنا

 

آلِ اطہارؓ سے وابستگی تا عمر رہے

دل میں اشفاقؔ کے تو اُلفتِ شبرؓ رکھنا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ