اردوئے معلیٰ

Search

تمہیں کیا خبر ہے محبت کی دیوی
کہ جب شہرِ وحشت کی وسطی گلی میں
تمہاری مسافت کا بِیڑا اٹھا کر
تجسس پہ زینیں کسی جا رہی تھیں
تو کچھ لوگ ایسے تھے جو برہنہ پاء
مسافت کے آگاز کے منتظر تھے
اگرچہ بدن پر جو پوشاک تھی ، وہ
بدن کی طوالت سے کم پڑ رہی تھی
کوئی زادِ راہِ محبت نہیں تھا
نہ دام و درم نہ زر و سیم کوئی
یہاں تک کہ ان کو وداع کرنے والی
کوئی آنکھ تھی نہ کوئی ہاتھ ہی تھا
وہ ہجرت بھی کرتے تو ان کی کمی کو
کوئی بھی نہیں تھا کہ محسوس کرتا
تمہیں کیا خبر ہے محبت کی دیوی
گئی عمر میںجب تمہاری مسافت
بدن کو مشقت نہیں لگ رہی تھی
تو چلنے کا انداز بھی مختلف تھا
یہی پا برہنہ وفورِ تجسس میں
صرصر کی مانند بڑھنے لگے تھے
وہی جو ہمیشہ ہراک کارواں کی
اڑائی ہوئی گرد میں غرق ہوتے
مچل کر اٹھے تو
ہر اک کارواں گردِ رہ بن گیا تھا
وہ پر عزم پر جوش نادان انساں
ہوئے تند ایسے کہ جب راستے میں
تمہارا دریچہ کھلا بھی ، تو ان میں
ٹھہرنے کی طاقت ہی باقی نہیں تھی
وہ رکنے کے انداز گم کر چکے تھے
تمہیں کیا خبر ہے محبت کی دیوی
کہ کچھ لوگ ایسے بھی ہیں راستے میں
مسلسل نظر جن کی تم پر جمی ہے
اگرچہ وہ تم سے پرے جا رہے ہیں
مگر الٹے قدموں چلے جا رہے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ