چمنِ طیبہ میں سنبل جو سنوارے گیسو

 

چمنِ طیبہ میں سنبل جو سنوارے گیسو

حور بڑھ کر شکنِ ناز پہ وارے گیسو

 

کی جو بالوں سے تِرے روضے کی جاروب کشی

شب کو شبنم نے تبرک کو ہیں دھارے گیسو

 

ہم سیہ کاروں پہ یا رب! تپشِ محشر میں

سایہ افگن ہوں تِرے پیارے کے پیارے گیسو

 

چرچے حوروں میں ہیں دیکھو تو ذرا یالِ براق

سنبلِ خلد کے قربان اتارے گیسو

 

آخرِ حج غمِ امّت میں پریشاں ہو کر

تیرہ بختوں کی شفاعت کو سدھارے گیسو

 

گوش تک سنتے تھے فریاد اب آئے تا دوش

کہ بنیں خانہ بدوشوں کو سہارے گیسو

 

سوکھے دھانوں پہ ہمارے بھی کرم ہو جائے

چھائے رحمت کی گھٹا بن کے تمھارے گیسو

 

کعبۂ جاں کو پنھایا ہے غلافِ مشکیں

اُڑ کر آئے ہیں جو ابرو پہ تمھارے گیسو

 

سلسلہ پا کے شفاعت کا جھکے پڑتے ہیں

سجدۂ شکر کے کرتے ہیں اشارے گیسو

 

مشک بو کوچہ یہ کس پھول کا جھاڑا ان سے

حوریو عنبرِ سارا ہوئے سارے گیسو

 

دیکھو قرآں میں شبِ قدر ہے تا مطلعِ فجر

یعنی نزدیک ہیں عارض کے وہ پیارے گیسو

 

بھینی خوشبو سے مہک جاتی ہیں گلیاں واللہ

کیسے پھولوں میں بسائے ہیں تمھارے گیسو

 

شانِ رحمت ہے کہ شانہ نہ جدا ہو دم بھر

سینہ چاکوں پہ کچھ اس درجہ ہیں پیارے گیسو

 

شانہ ہے پنجۂ قدرت تِرے بالوں کے لیے

کیسے ہاتھوں نے شہا تیرے سنوارے گیسو

 

احدِ پاک کی چوٹی سے الجھ لے شب بھر

صبح ہونے دو شبِ عید نے ہارے گیسو

 

مژدہ ہو قبلے سے گھنگھور گھٹائیں اُمڈیں

ابروؤں پروہ جھکے جھوم کے بارے گیسو

 

تارِ شیرازۂ مجموعۂ کونین ہیں یہ

حال کھل جائے جو اِک دم ہوں کنارے گیسو

 

تیل کی بوندیں ٹپکتی نہیں بالوں سے رؔضا

صبحِ عارض پہ لٹاتے ہیں ستارے گیسو

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

کتنے حسیں ہیں گیسو و رُخسارِ مصطفیٰؐ
ہر موج ہوا زلف پریشانِ محمدؐ
اندھیری راتیں اجال رکھیں بہ اسمِ احمد
قصہء شقِّ قمر یاد آیا​
بہارِ باغِ عدن ہے آقا تری صباحت کے صدقے واری
گھڑی مڑی جی بھر آوندا اے ۔ پنجابی نعت
مدح کب تک شہِ کونین ! شنیدہ لکھوں
جو عرش کا چراغ تھا میں اس قدم کی دھول ہوں
درکار ہے حضور!! نہ دولت نہ عزَّ و جاہ
بے مثل ہے کونین میں سرکارؐ کا چہرہ

اشتہارات