اردوئے معلیٰ

کرے حمدِ رِب ہے یہ کس کی زبان​

کرے حمدِ رِب ہے یہ کس کی زبان​

نبی کو ہے اِقرارِ عجز بیان​

 

یہاں طاقتِ نُطق پاتا نہیں​

کہ کوزے میں دریا سماتا نہیں​

 

اسی طرح نعتِ رسول کریم​

بیان کس سے ہو جز خدائے قدیم​

 

وہ ہیں آسمانِ نُبوت کے بدر​

خدا ہی کو معلوم ہے ان کی قدر​

 

مناسب ہے اس سے بھی عطف عنان​

کروں مختصر حال اپنا بیان​

 

بجا ہے امیر احمد اسم فقیر​

فقیر در مصطفیٰ ہے امیر​

 

تخلص امیر اس لیے ہے میرا​

کہ ہوں میں فقیر در مصطفیٰ ​

 

طبیعت میں اول سے تھا ذوقِ علم​

رہا ابتدا سے مجھے شوقِ علم​

 

کتب تھیں جو درسی پڑھی وہ تمام​

پڑھایا کیا صبح سے تا بہ شام​

 

مگر شاعروں سے جو صحبت ہوئی​

سوء نظم مائل طبیعت ہوئی​

 

یہی سالہا شغل میرا رہا​

کہ دریائے فکرت میں ڈوبا رہا​

 

وہ کیا نظم ہے جو میں نے کہی​

رُباعی، قصیدہ، غزل، مثنوی​

 

مضامین کی روزانہ اکثر تلاش​

مضامینِ تازہکی شب بھر تلاش​

 

مناسب طبیعت تھی شہرت ہوئی​

مشقت سے لیکن مشقت ہوئی​

 

یہ آیا میرے دل میں ایک دن خیال​

کہ کب تک یہ اشغال خسران مآل​

 

چہل سال عمر عزیزت گزشت​

مزاج تو از حالطفلی نگشت​

 

وہ کر فکر جس میں کہ عقبیٰ ہوپاک​

ترا اخترِ بخت ہو تابناک​

 

مناسب ہے فکر مضامین نعت​

کہ تزئین ایمان ہے تبیین نعت​

 

کرے تا خدا خود صلہ مرحمت​

محمد کے صدقے سے ہو مغفرت​

 

مگر اور فکروں سے فرصت نہ تھی​

معیشت سے حاصل فراغت نہ تھی​

 

اُٹھے ہاتھ میرے جو بہر دُعا​

ہوا بخت یاور مرا رہنما​

 

میں اُس دَر پہ پہونچا جو ہے بابِ فیض​

کھلے ہیں اسی در پہ ابواب فیض​

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ