اردوئے معلیٰ

Search

کوئی بھی حرف سپردِ قلم نہیں کیا ہے

کہ تیرے نام کو جب تک رقم نہیں کیا ہے

 

ہمیں بھی حکم تھا لغزش کے بعد توبہ کا

کریم نے بھی سپردِ ستم نہیں کیا ہے

 

خرد کو خواہشِ تابِ نظر رہی، لیکن

جنوں نے دید کے منظر کو خم نہیں کیا ہے

 

کِواڑ اُس نے بھی سارے عطا کے وا رکھے

سوال ہم نے بھی کچھ بیش و کم نہیں کیا ہے

 

بس ایک ساعتِ دیدِ کرم رہی قائم

پسِ حجاب بھی آنکھوں کو نم نہیں کیا ہے

 

بس ایک طیبہ کی دُھن میں ہے ُگم یہ عمرِ رواں

خیال و خواب کو وقفِ ارم نہیں کیا ہے

 

مَیں تیرے شہر میں پہنچا ہوں اور سوچتا ہوں

مرے کریم نے کیا کیا کرم نہیں کیا ہے

 

زمانہ گرچہ ہے بے طرح سے عدو، لیکن

تمھارے ہوتے ہوئے کوئی غم نہیں کیا ہے

 

عطا و اذن سے نعتِ نبی لکھی مقصودؔ

تکلفاً کوئی مصرع بہم نہیں کیا ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ