اردوئے معلیٰ

کوہ و دامان و زمین و آسماں کچھ بھی نہیں

ہاتھ دو پھیلے ہیں جن کے درمیاں کچھ بھی نہیں

 

حسرت و وحشت میں آتش ہو گئی بے چارگی

راکھ ہے باقی جہاں دل تھا وہاں کچھ بھی نہیں

 

خاک کا جب لمس پیشانی پہ اُترا تو کھلا

خاک سب کچھ ہے جبین و آستاں کچھ بھی نہیں

 

طاق میں اب گرد ہے یا صرف کالک کا نشاں

کوئی مشعل ، کوئی شعلہ یا دھواں کچھ بھی نہیں

 

اب فقط آزردگی باقی ہے دشتِ یاس میں

سارباں ، محمل ، غبار ِ کارواں کچھ بھی نہیں

 

دل، کہ بے حس بھی ہوا ، حساس بھی، سو اس پہ اب

کارگر کچھ بھی نہیں ہے ، رائیگاں کچھ بھی نہیں

 

در کھلا ہے ایک مدت سے مگر دہلیز پر

ما سوائے حسرتِ گریہ کناں کچھ بھی نہیں

 

پیس ڈالا ہے وجودِ شوق کو جس بوجھ نے

کوئی زندہ ہو تو یہ بارِ گراں کچھ بھی نہیں

 

خون میں لتھڑا بدن یا روحِ گرد آلود ہو

اب تمہارے لمس کے لائق یہاں کچھ بھی نہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات