گلِ باغِ نبی مخدوم صابر

گلِ باغِ نبی مخدوم صابر

چراغِ حیدری مخدوم صابر

 

تری جلوہ گری مخدوم صابر

ہوئی محسوس ابھی مخدوم صابر

 

عطا ہو ساغرِ عرفاں مجھے بھی

مٹا دو تشنگی مخدوم صابر

 

مجھے سیراب کر دے گی یقیناً

تری دریا دلی مخدوم صابر

 

تری چشمِ کرم جس کو نوازے

اسے کیا ہو کمی مخدوم صابر

 

ستاروں کو سکھائے مسکرانا

تری خندہ لبی مخدوم صابر

 

صبا لے آئے جو خوشبو تمہاری

کھلے دل کی کلی مخدوم صابر

 

ترے کوچے میں پائی میرے دل نے

فضا بغداد کی مخدوم صابر

 

بفیضِ حضرتِ نواب مجھ کو

ملی نسبت تری مخدوم صابر

 

ملے صدقہ مجھے گنجِ شکر کا

بھرو جھولی مری مخدوم صابر

 

مجیبؔ آیا ہے در پر مانگنے کو

تمہاری روشنی مخدوم صابر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ