اردوئے معلیٰ

Search

ہر رات ہے پُر نور ہر اک صبح سہانی

دیکھی ہے ترے شہر کی وہ نور فشانی

 

کیوں اور کسی در پہ کروں اپنی جبیں خم

جب آپ سے ملتا ہے مجھے دانہ و پانی

 

ہے کتنا گراں مایہ زرِ خاکِ مدینہ

اُس شہر کا ممکن ہی نہیں ہے کوئی ثانی

 

پوچھیں گے نکیرین جو مَاکُنْتَ تَقُوْلُ

ان کو بھی جواباً ہے تری نعت سنانی

 

اُن کا ہوں غلام اُن کے ہی نعلینِ کرم بار

سینے پہ سجاتا ہوں سند بہرِ نشانی

 

جو روشنی گنبد سے شب و روز عیاں ہے

مخرج ہے ہرا، اس کا تبھی رنگ ہے دھانی

 

ہے حکمِ شریعت کہ نہ ہو سجدۂ تعظیم

دل کرتا رہا سجدے مری ایک نہ مانی

 

وہ اذنِ حرم دستِ کرم سے مجھے دیں گے

ہر نعت میں لکھتا ہوں تبھی ہجر کہانی

 

منظر یہ نہیں مشقِ سخن، خونِ جگر ہے

یہ عجز بیانی ہے مری عجز بیانی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ