اردوئے معلیٰ

Search

 

ہم کو دامن اُن کو گنجِ شائگاں بخشا گیا

یوں فقیروں کو وہ دستِ مہرباں بخشا گیا

 

آدمی کو اُن کے صدقے نعمتِ عظمیٰ ملی

دینِ برحق کا شعورِ جاوداں بخشا گیا

 

جس نے اُن کی پیروی کا ہر قدم رکھا خیال

وہ تو محشر میں بِلا ریب و گماں بخشا گیا

 

چلچلاتی دھوپ، دشتِ بے کراں، انساں فگار

ایسے لمحے رحمتوں کا سائباں بخشا گیا

 

فکرِ انساں کو عطا کرنی تھی وسعت اس لیے

صورتِ قرآن، علم بے کراں بخشا گیا

 

روضۂ اطہر کی صورت اے زمیں والو تمہیں

اِک ریاضِ نور، صد رشکِ جناں بخشا گیا

 

مدحتوں کے پھول کھل جاتے ہیں لفظوں میں عزیزؔ

اُلفتِ آقا کے صدقے، گلستاں بخشا گیا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ