اردوئے معلیٰ

Search

ہے ناطِقِ مَا اَوْحٰی اِک تیرا دہن جاناں

تو روحِ معانی ہے تو جان سخن جاناں

 

تاروں میں چمک تیری ہے جلوہ فگن جاناں

پھولوں میں تِری خوشبو ، تو اصلِ چمن جاناں

 

گر آؤ گلستاں میں ،گُل کترے قبا اپنی

قدرت نے تراشا یوں ہے تیرا بدن جاناں !

 

کیا ماہِ دو ہفتہ پر ملبوس گلابی ہے

یا حُلّۂِ حمرا میں ہے تیرا بدن جاناں

 

کی رب نے خریداری یوں تیرے غلاموں سے

جانیں ہیں مبیع ان کی ،جنت ہے ثمن جاناں

 

قربان نہ کیوں ہوتا پھر چاند بھی شق ہو کر

جوبن پہ جو چمکی تھی انگلی کی کرن جاناں

 

مخمور نگاہوں سے گر تیرا اشارہ ہو

نشّہ ہو عدو کا سب لمحے میں ہرن جاناں !

 

سلطانِ بلاغت بھی اِک حرف تِرا سن کر

رکھتا ہے ترے قدموں میں سارا سخن جاناں

 

جلووں سے ترے روشن ہو گھر بھی شہا ، جیسے

مدحت سے معظمؔ کا پر نور ہے فن جاناں !

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ