اردوئے معلیٰ

یارب! تری رحمت کا خزینہ نظر آئے

یارب! تری رحمت کا خزینہ نظر آئے

بے تاب نگاہوں کو مدینہ نظر آئے

 

ہے عُمرِ رواں گردشِ طوفاں سے ہراساں

کر فضل کہ منزل پہ سفینہ نظر آئے

 

مجھ کو بھی بلانا مرے مالک! ، مرے داتا!

جب آتا ہوا حج کا مہینہ نظر آئے

 

سب لوگ کہیں دیکھ کے آقا کا گدا ہے

اے کاش! کہ جینے میں یہ جینا نظر آئے

 

ہو وردِ زباں نام ترا ، دل میں تری یاد

سجدوں کے لیے کعبے کا زینہ نظر آئے

 

جب پہنچے مدینے میں رضاؔ تیری عطا سے

معراج پہ میرا بھی قرینہ نظر آئے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ