اردوئے معلیٰ

Search

 

آساں تو نہیں لکھنی کچھ نعتِ نبی آخر

مجبور کیا دل نے لکھنی ہی پڑی آخر

 

رحمت کی نظر میرے اللہ نے کی آخر

نبیوں میں جو اول تھا بھیجا وہ نبی آخر

 

باقی تھی کسر تھوڑی جو قصرِ نبوت میں

بعثت سے محمد کی پوری وہ ہوئی آخر

 

نکلا جو مہِ بطحا کافور ہوئی ظلمت

اس عالمِ تیرہ کی تقدیر کھلی آخر

 

زخموں سے تھا چور انساں بے چارہ و بے درماں

وہ آیا تو اس نے ہی کی چارہ گری آخر

 

توحید کی چوکھٹ پر لے آئے وہ انساں کو

در در کی گدائی سے اف جان چھٹی آخر

 

صف بستہ ملائک ہیں خدمت میں کمر بستہ

دربارِ مدینہ ہے اللہ غنی آخر

 

محشر میں جو کام آتا نکلا نہ کوئی ایسا

اس امتِ عاصی کے کام آئے وہی آخر

 

دربار میں آقا کے پہنچے کا نظرؔ تو بھی

وہ چشمِ کرم ہو گی تجھ پر بھی کبھی آخر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ