اردوئے معلیٰ

علامہ اقبالؒ

یاد تیری لے رہی ہے آج دل میں چٹکیاں

ہم تیری توصیف میں پھر ہو گئے رطب اللساں

 

افتخارِ آدمیت نازِ ابنائے زماں

ارجمند اقبال اے اقبال تو فخرِ جہاں

 

طائرِ رنگیں نوا اے آبروئے گلستاں

خوش ادا شیریں سخن شیریں دہن شیریں زباں

 

اے کہ تو اک فلسفی علامہٴ دورِ زماں

شاعرِ شعلہ نفس آتش نوا معجز بیاں

 

واقفِ اسرارِ پنہاں کاشفِ سرِّ نہاں

رازدانِ بے خودی سرِّ خودی کا ترجماں

 

تھا سراپا دردِ ملت پیکرِ آہ و فغاں

سینۂ اسلام کا بسمل جگر قلبِ تپاں

 

بے قرار و مضطرب آشفتۂ و شعلہ بجاں

تھا فراقِ دینِ احمد میں نوا سنجِ فغاں

 

اے کہ تو مستِ مئے نابِ خمستانِ حجاز

تھا تو ہندی میکدے میں مثلِ گلبانگِ اذاں

 

تو مذاقِ دل بھی سمجھا تو مذاقِ عقل بھی

رازدارِ عشق حسنِ لم یزل کا رازداں

 

تھے زمین و آسماں تیرے تخیل کے اسیر

وسعتِ پایاں تھی تجھ کو وسعتِ کون و مکاں

 

فخرِ دانش نازِ حکمت افتخارِ فلسفہ

معنی و مضموں کا تھا لاریب بحرِ بیکراں

 

ذات سے تیری سراپائے سخن ہر اک نکھار

گیسوئے اردو کو تو نے کر دیا عنبر فشاں

 

شعر تیرے آئینہ دارِ حقائق بر ملا

طائرِ فکرِ رسا تیرا تھا اف عرش آشیاں

 

تاجدارِ نظم بھی ہے اور شہنشاہِ غزل

ہر گلستانِ ادب میں تو رہا گوہر فشاں

 

دور رس تیری نظر تھی دور رس تیرا خیال

نکتہ بین و نکتہ پرور نکتہ سنج و نکتہ داں

 

ہے ترے اشعار میں وہ نورِ ایماں کی چمک

مقتبس لاریب جس سے ہوں قلوبِ مومناں

 

ہاں وہی ملت کہ کہتے ہیں براہیمی جسے

تو اسی کا نوحہ گر تھا تو اسی کا نغمہ خواں

 

تو کہ تھا نباضِ ملت اے حکیمِ بے بدل

نسخۂ اکسیر اثر بتلا دیے سب بے گماں

 

شاعرِ مشرق نہیں بس شاعرِ اسلام ہے

ترجمانِ اَلحدیث و ترجمانِ اَلقرآں

 

خواب دیکھا تھا کبھی تو نے جو پاکستان کا

اٹھ کے تعبیر اس کی دیکھ آسودۂ خوابِ گراں

 

منزلِ ہستی میں تھا جب تک بقیدِ غم رہا

ہو مبارک تجھ کو لطف و عیشِ باغاتِ جناں

 

تیری تخلیقات ساری باقیات الصالحات

تو سدا موجود ہے اہلِ نظرؔ کے درمیاں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ