اردوئے معلیٰ

Search

 

اے اشہبِ قلم یہ ہے نعتِ شہِ شہاں

چھوڑوں گا ایک لمحہ بھی تجھ کو نہ بے عناں

 

سرتاجِ انبیاء ہے وہ سرخیلِ مرسلاں

محبوبِ رب ہے اور وہ مخدومِ بندگاں

 

مضمونِ دوجہاں کا ہے وہ حاصلِ بیاں

ہے بزمِ کن فکاں میں وہ مقصودِ کن فکاں

 

ہے ذات اس کی رونقِ معمورۂ جہاں

اس کے ہی دم قدم سے منور ہے خاکداں

 

ہے روزِ حشر دور قیامت ابھی کہاں

ہو جائے ختم کیسے ابھی اس کی داستاں

 

طائف کا سانحہ وہ بدستِ ستم گراں

جب آپ راہِ حق میں ہوئے تھے لہو لہاں

 

ہے کیا عجب نگاہِ بشر ہو جو خوں چکاں

خوں بار ہے نگاہِ افق دیکھئے جہاں

 

پائیں مزہ عسل کا جو میرے لب و دہاں

تسکین پائیں ذکرِ دل آرا سے قلب و جاں

 

اے ہم نشیں مجھے شبِ معراج کی قسم

پردہ سرائے عرش کا بھی وہ ہے رازداں

 

دفتر بھرے پڑے ہیں یہ مانا ہزارہا

ضبطِ بیاں میں آ نہ سکیں پھر بھی خوبیاں

 

رشتہ خدا کا بندوں سے ہوتا نہ استوار

ہوتا نہ گر وہ بندہ و خالق کے درمیاں

 

قرآن کی قسم کہ وہ قرآن ہی تو ہے

سیرت شہِ امم کی میں کیسے کروں بیاں

 

مل جائے تجھ کو کاش شفاعت حضور کی

کام آئیں اے نظرؔ تیری مدحت طرازیاں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ