اردوئے معلیٰ

Search

 

خدا نے چن کے رکھا ہے مبارک نامِ نامی ہے

حبیبِ کبریا واللہ وہ ذاتِ گرامی ہے

 

نبوت ختم ہے ان پر رسالت اختتامی ہے

میانِ بندہ و مولا وہ آخر کا پیامی ہے

 

شفیعِ روزِ محشر ہے گنہ گاروں کا حامی ہے

مرے آقا کی شخصیت بڑی نامی گرامی ہے

 

وہ ساقی ہے مئے وحدت کا میخانہ عوامی ہے

یہیں پر تشنہ کام آئیں یہیں پر شادکامی ہے

 

بوقتِ شام طاری غلبۂ شوقِ سلامی ہے

یونہی خورشید کی روضہ کی جانب تیز گامی ہے

 

تری درگاہ مرجع ہے مسلمانانِ عالم کا

یہ چینی ہے یہ ہندی ہے یہ مصری ہے یہ شامی ہے

 

تمہارا ذکر ہے مستوجبِ خوشنودی یزداں

تمہارا نام لینے سے ہماری نیک نامی ہے

 

یہ یومِ فتحِ مکہ ہے معافی عام دی سب کو

دلِ اطہر میں غصہ ہے نہ جذبہ انتقامی ہے

 

ہزاروں تاجِ سلطانی پڑے ہیں ان کی ٹھوکر میں

غلامانِ محمد کی تو شاہانہ غلامی ہے

 

کمالِ اعتدال آتا نظرؔ ہے ان کی سیرت میں

کہیں افراط کا پہلو نہ اس میں کوئی خامی ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ