اردوئے معلیٰ

Search

 

بھٹک رہا تھا زمانہ درِ خدا نہ ملا

شہِ مدینہ کا جب تک نہ آستانہ ملا

 

خرد کو علم سے نکتہ یہ عارفانہ ملا

اُسے خدا نہ ملا جس کو مصطفیٰ نہ ملا

 

ہماری زمزمہ سنجی کو اک ترانہ ملا

ہماری روح کی تسکیں کو پنجگانہ ملا

 

فلاحِ زیست کو اک دین عادلانہ ملا

رسولِ پاک کے صدقہ میں ہم کو کیا نہ ملا

 

مرے نبی کے برابر نبی نہیں کوئی

مجھے وہ ختم رسل یکتا و یگانہ ملا

 

انھیں کے ہاتھوں ملا ہے صحیفۂ قرآں

نہ ختم ہو جو کبھی ہم کو وہ خزانہ ملا

 

ملا ہے خاک میں شاہوں کا سب غرورِ شہی

ترے گداؤں کو وہ تاجِ خسروانہ ملا

 

وہ ارجمند ہے وہ خوش نصیب ہے لاریب

نبی کے شہر کا جس جس کو آب و دانہ ملا

 

بروزِ حشر ہم عاصی بھلا کہاں جاتے

انھیں کے دامنِ رحمت میں بس ٹھکانہ ملا

 

نگاہِ لطفِ خدا، کیفِ جاں، سُرورِ دل

نظرؔ کو اُن کی ثنا کا یہ محنتانہ ملا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ