اردوئے معلیٰ

Search

 

بہر صورت میں مشغولِ ثنائے یار ہو جاؤں

کہ اس حسنِ عمل سے خلد کا حقدار ہو جاؤں

 

رسائے بارگاہِ سیدِ ابرار ہو جاؤں

تمنّا ہے کہ میں لذّت کشِ دیدار ہو جاؤں

 

ذرا پہنچوں سہی اس بارگاہِ ناز تک میں پھر

خیالِ واپسی سے برسرِ پیکا رہو جاؤں

 

خوشا پامالیاں میری زہے خوش طالعی میری

جو میں پیوندِ خاکِ کوچۂ دلدار ہو جاؤں

 

تری نعلینِ پا کا ایک تسمہ بھی جو مل جائے

تو میں گنجِ گراں کا مالک و مختار ہو جاؤں

 

نہیں کچھ خوفِ راہِ پل صراط ایسا مجھے لوگو

بہ جست گام ان کا نام لے کر پار ہو جاؤں

 

مجھے تو جامِ وحدت کا فقط اک جام کافی ہے

میں کیوں ساغر کشِ میخانۂ اغیار ہو جاؤں

 

ہے میری کامیابی، فتح و نصرت کی یہی کنجی

جہادِ زندگی میں پیروِ سالار ہو جاؤں

 

فرشتے بھی سلامی کو نظرؔ آنے لگیں میری

اگر میں پیروِ آں سیرت و کردار ہو جاؤں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ