اردوئے معلیٰ

Search

جو یادِ نبی میں نکلتے ہیں آنسو

گراں موتیوں میں وہ ڈھلتے ہیں آنسو

 

اُمڈتا ہے آنکھوں میں گویا سمندر

جو دھیرے سے پلکوں پہ چلتے ہیں آنسو

 

جونہی یاد آتی ہیں طیبہ کی گلیاں

نہیں پھر سنبھالے سنبھلتے ہیں آنسو

 

تصور میں لاتا ہوں جب بھی مدینہ

تو بے ساختہ یہ ابلتے ہیں آنسو

 

گریں گے یہ ارضِ مدینہ پہ جا کر

مری چشمِ تر میں جو پلتے ہیں آنسو

 

خوشا! ان کا روضہ مرے سامنے ہے

نکلنے کو اب یہ مچلتے ہیں آنسو

 

اثاثہ یہی ہیں جلیلِ حزیں کا

جو نکلیں تو قسمت بدلتے ہیں آنسو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ