اردوئے معلیٰ

Search

رقص کرتی ہوئی جاتی ہے صدا کیف میں ہے

نامِ احمد کے سبب میری دعا کیف میں ہے

 

رات خوشبو میں نہائی ہے دیا کیف میں ہے

ذکرِ پر نور کی برکت سے فضا کیف میں ہے

 

اُن کے آنے سے ہوا باغ معطّر ایسا

ہر کلی لطف میں ہے بادِ صبا کیف میں ہے

 

آمدِ نور میں لپٹا ہے جہاں کا منظر

جشنِ میلاد ہے اور آب و ہوا کیف میں ہے

 

اس کے ہر ذرّے سے پھوٹی ہے ضیا آج کی رات

” چھو کے نعلینِ کرم غارِ حرا کیف میں ہے “

 

تازگی جتنی ہے دنیا میں اُسی در سے ہے

سبز گنبد کو جو چھوتی ہے ہوا کیف میں ہے

 

ایسا لگتا ہے کہ سرکار نے سن لی اس کی

آج ہنستا ہوا جاتا ہے فدا کیف میں ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ