اردوئے معلیٰ

Search

رنجِشیں دل سے یوں مِٹاتا ہُوں

پِچھلی باتوں کو میں بُھلاتا ہُوں

 

عاشقانِ نبی کا ہُوں ہمدم

خود کو اعداء سے میں بچاتا ہُوں

 

جو بھی ذِکرِ نبی سے جلتے ہیں

ان کو میں اور بھی جلاتا ہُوں

 

میرے گھر میں ہیں جو مری بہنیں

شفقتیں اُن پہ میں لُٹاتا ہُوں

 

میرے ماں باپ کی دعائیں ہیں

عزتیں آج میں جو پاتا ہُوں

 

مشکلیں مشکلوں میں پڑتی ہیں

یا نبی کی صدا لگاتا ہُوں

 

غفلتوں میں پڑے ہیں جو مرزا

اپنے اشعار سے جگاتا ہوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ