اردوئے معلیٰ

Search

عاصی ہوں میں سرکار مگر میری صدا ہے

مرقد ہو مدینے میں فقط ایک دعا ہے

 

گر اذنِ مدینہ مرے اشکوں کو ملے دان

گریہ کی ملے اس بڑی کیا ہی جزا ہے

 

ہو گنبدِ خضرا کی تجھے چھاؤں میسر

ملتی ہے مجھے ماں سے جو اکثر یہ دعا ہے

 

مجھ کو بھی حضوری کا شرف ہو کہ میں دیکھوں

کیسی مرے سرکار مدینے کی فضا ہے

 

پہلے سے زیادہ ہے تڑپ ان کی گلی کی

تحفہ مجھے زمزم کا کسی سے جو ملا ہے

 

نعتوں میں مدینے کا جو لکھتا ہے وہ میں ہوں

سرکار جو دن رات تڑپتا ہے، عطا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ