اردوئے معلیٰ

Search

مجھ پہ آقا کی بس اک بار نظر ہو جائے

زندگی کتنی تسلّی سے بسر ہو جائے

 

دل ٹھکانہ بنے محبوبِ الٰہی تیرا

اور مری آنکھ تری راہ گزر ہو جائے

 

یادِ سرکار سے صحرا سے بھی خوشبو آئے

اسمِ سرکار سے مٹّی بھی گہر ہو جائے

 

تیرا دیوانہ بنے مثل زمانے کے لیے

شعر مدحت کے کہے اور امر ہو جائے

 

گُل و گلزار فدا رستے ہوئے جاتے ہیں

شاہِ عالم کا جدھر سے بھی گزر ہو جائے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ