اردوئے معلیٰ

Search

 

نبی کا گُلستاں ہے اور میں ہوں

محبت کا جہاں ہے اور میں ہوں

 

درِ سرکار پر ہے چشم گریاں

جبیں سجدہ کناں ہے اور میں ہوں

 

یہ اُن کا فیض ہے اُن کی عطا ہے

نبی کا آستاں ہے اور میں ہوں

 

درِ اقدس پہ لرزاں، خیزاں، اُفتاں

گروہِ عاشقاں ہے اور میں ہوں

 

ادب سے سر خمیدہ اُن کے در پر

زمیں ہے، آسماں ہے اور میں ہوں

 

درُود و نعت ہے جاری و ساری

مکاں ہے، لا مکاں ہے اور میں ہوں

 

ظفرؔ سرکار کی نگہِ گرم سے

مُنوّر میری جاں ہے اور میں ہوں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ