اردوئے معلیٰ

Search

پردۂ تکوین پر جب جلوۂ یزداں کُھلا

دفترِ تمدیح جانِ عالمِ اِمکاں کُھلا

 

اِک تسلسل چل رہا تھا بے نہایت دید کا

خواب کے ما بعد جب یہ دیدۂ حیراں کُھلا

 

خون حسرت تھوکتے تھے زخم ہائے شوقِ دل

مندمل ہوتے گئے جب دید کا درماں کُھلا

 

ہو گئے روشن شعور و آگہی کے قمقمے

نعت کے جب بام پر بابِ شہِ خوباں کُھلا

 

کب تری نسبت نے رکھا ہے حصارِ حبس میں

کب تری مدحت کے ہوتے خانۂ حرماں کُھلا

 

تا ابد متروک ٹھہرے سلسلہ ہائے نزول

خاورِ بعثت پہ جب وہ مطلعِ قُرآں کُھلا

 

والئ اقلیمِ مِلکِ ذوالمنن کے سامنے

کب لبِ شکوہ طرازِ تنگئ داماں کُھلا

 

فیض یابِ خیرِ کامل ہو گئے سب تشنہ لب

اُس سحابِ خیر کا جب موسمِ باراں کُھلا

 

کب کسی کو منفعل ہونے دیا ہے آپ نے

کب کسی عاصی کا محضر نامۂ عصیاں کُھلا

 

نعت ہی مقصودؔ ہے عقدہ کشائے ہست و بُود

سخت مشکل تھی مگر مَیں کس قدر آساں کُھلا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ