اردوئے معلیٰ

Search

کیا کر گئی وہ تیغِ ادا ہم سے پوچھیے

گزری شہیدِ عشق پہ کیا ہم سے پوچھیے

 

رحمت گناہگارِ محبت پہ ہو نہ ہو

خوف و ہراسِ روزِ جزا ہم سے پوچھیے

 

مرضی خدا کی کیا ہے کوئی جانتا نہیں

کیا چاہتی ہے خلقِ خدا ہم سے پوچھیے

 

کٹتا ہے دن نہ رات گزرتی ہے چین سے

بے لطف زندگی کی سزا ہم سے پوچھیے

 

برپا کیا ہے ظلم و ستم جس نے شہر میں

اس پیکرِ جفا کا پتا ہم سے پوچھیے

 

سیلابِ غم میں ہم نے گزاری ہے ایک عمر

آئی کہاں سے موجِ بلا ہم سے پوچھیے

 

انسانیت ہی جیسے زمانے سے اُٹھ گئی

ہر سمت کیوں ہے آہ و بکا ہم سے پوچھیے

 

شر و فساد قربِ قیامت کی ہے دلیل

کب ہو گا روزِ حشر بپا ہم سے پوچھیے

 

ماضی کی یاد وجہِ مسرت بھی ہے سحرؔ

آیا ہے آج کتنا مزا ہم سے پوچھیے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ