اردوئے معلیٰ

Search

اک تحفۂ نو سوئے حرم لے کے چلے ہیں

پہلو میں محبت کا صنم لے کے چلے ہیں

 

صحرا میں کہاں پرتوِ اندازِ گلستاں

خود اپنی نگاہوں کا بھرم لے کے چلے ہیں

 

کیا حال ہے دل کا اسے اب کون بتائے

محفل سے تری دیدۂ نم لے کے چلے ہیں

 

کانٹوں کا گلہ کیا ہے کہ ہم راہِ طلب میں

اک دشتِ بلا زیرِ قدم لے کے چلے ہیں

 

ہر جُنبشِ پا کاشفِ اسرارِ جہاں ہے

ہم جب بھی چلے ساغرِ جم لے کے چلے ہیں

 

سرمایۂ دل ، جنسِ وفا ، خوابِ تمنا

کیا کیا سرِ بازارِ ستم لے کے چلے ہیں

 

آئی ہے کسی جلوۂ گہِ ناز کی پھر یاد

بھولے ہوئے کچھ قول و قسم لے کے چلے ہیں

 

منزل پہ پہنچ کر عجب افتاد پڑی ہے

اک قافلۂ یاس و الم لے کے چلے ہیں

 

کام آئی نہ تدبیر کوئی اہلِ وفا کی

آخر وہی تقدیر کا غم لے کے چلے ہیں

 

سوزِ غمِ الفت کہ سحرؔ سوزِ غمِ دہر

ہر سوز پئے لوح و قلم لے کے چلے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ